بنیادی باتیں: صحت بخش غذا کھانے، ذیابیطس سے بچنے اور اس پر قابو پانےکیلئے تجاویز

ذیابیطس اس وقت لاحق ہوتی ہے جب آپ کا جسم غذا کو صحیح طریقے سے استعمال اور اپنے اندر ذخیرہ نہیں کر سکتا۔ آپ کے جسم کو جس ایندھن کی ضرورت ہوتی ہے اسےگلوکوزکہتے ہیں، جو شکر کی ایک قسم ہے۔ گلوکوز ایسی غذاؤں سے حاصل ہوتا ہے جن میں کاربوہائیڈریٹ پایا جاتا ہے، جیسے کہ پھَل، دودھ، نشاستے والی غذائیں، چینی، اور کچی سبزیاں۔ ذیابیطس میں، خون میں گلوکوزکی مقدار بہت زیادہ ہو جاتی ہے۔

ذیابیطس کی مختلف قسمیں ہوتی ہیں۔ مندرجہ ذیل چارٹ یہ وضاحت کرتا ہےکہ بلڈ گلوکوز (خون میں موجود شکر) پر قابو پانےکیلئے ان اقسام کو کیسے کنٹرول کیا جاتا ہے۔

ان اقسم پر کیسے قابو پایا جاتا ہے ذیابیطس کی اقسام
  • صحت بخش غذا کھانا
  • انسولین
  • جسمانی طور پر چاق و چوبند رہنا
ٹائپ 1 ذیابیطس
لبلبہ انسولین نہیں بناتا۔ توانائی کیلئے استعمال ہونے کی بجائےگلوکوز آپ کے خون میں جمع ہوتی رہتی ہے۔
  • صحت بخش غذا کھانا
  • جسمانی طور پر چاق و چوبند رہنا
  • گولیاں یا انسولین (کچھ صورتوں میں دونوں)
ٹائپ 2 ذیابیطس
لبلبہ کافی مقدار میں انسولین نہیں بناتا، یا آپ کا جسم جو بھی انسولین بناتا ہے اسے صحیح طریقے سے استعمال نہیں کرتا۔
  • صحت بخش غذا کھانا
  • جسمانی طور پر چاق و چوبند رہنا
ذیابیطس لاحق ہونے سے پہلے
خون میں شامل گلوکوز کی مقدار عام مقدار سے زیادہ ہوتی ہے، لیکن اتنی زیادہ نہیں کہ اس کی تشخیص
ٹائپ 2 کے طور پرکر دی جائے۔
  • صحت بخش غذا کھانا
  • جسمانی طور پر چاق و چوبند رہنا
  • انسولین استعمال کی جا سکتی ہے
حمل کے دوران ذیابیطس
حمل کے دوران بلڈ گلوکوز میں اضافہ ہونا شروع ہو جاتا ہے یا اس موقع پر پہلی مرتبہ اس کا علم ہوتا ہے۔